Alhikmah International

خاندانی مسائل

 آپ لوگوں کو یہاں پر ایک حدیث یاد کروانا چاہتا ہوں۔

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی حدیث ہے کہ اگر تم اللہ تعالیٰ پر توکل کرو اس طرح جیسے چڑیا توکل کرتی ہے 

تو اللہ تمہیں اسی طریقے سے رزق عطا فرمائے گا جس طرح سے پرندوں کو عطا فرماتا ہے۔

یعنی جب پرندے اپنے گھر سے نکلتے ہیں تب ان کے پیٹ خالی ہوتے ہیں اور جب واپس گھر آتے ہیں تب انکہ پیٹ بھرے ہوتے ہیں۔ 

اس حدیث کا یہ مطلب ہرگز یہ نہیں ہے کہ آپ نوکری کے لیے محنت و مشقت کرنا چھوڑ دے اور گھر بیٹھے بغیر کسی محنت کے رزق عطا ہو جائے گا۔ 

پرندے اپنے رزق کو حاصل کرنے کے لیے پورا دن محنت اور حرکت کرتے ہیں جو آپ کو بھی کرنی ہوگی۔

 ایک اور حدیث

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا  جب ایک بچہ ابھی اپنی ماں کے پیٹ میں ہوتا ہے۔ اللہ تعالیٰ تب ہی اس کا رزق لکھ دیتا ہے کہ اس بچہ کو دنیا میں کتنا رزق ملے گا۔

ایک اور حدیث میں فرمایا

 کہ تمہارا رزق تمہاری موت سے زیادہ تمہارا پیچھا کریں گا۔

آپ تب تک مر ہی نہیں سکتے جب تک آپ کے حصے کا رزق آپ کو نہیں مل جاتا۔ اس لیے نوکری نہ ہونے کی صورت میں پریشان بلکل بھی نہیں ہونا۔ 

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے