Alhikmah International

صفر المظفر

خط و کتابت کا کورس پاکستان

صفر قمری تقویم کا دوسرا مہینہ ہے۔ اس مہینے کے حوالے سے لوگوں میں بہت سی غلط فہمیاں پائی جاتی ہیں۔ ایک طرف تو اس مہینے کے ساتھ نحوست اور شگون وابستہ کیے گئے ہیں اور دوسری طرف اس ماہ میں شادی بیاہ نہ کرنے، چنے مٹر کو ابال کر تقسیم کرنے جیسی چیزوں کے خود ساختہ حل بھی تجویز کیے گئے ہیں۔ شگون دوسروں تک پہنچاتے ہیں، آٹے کی 365 گیندیں بنا کر پانی میں ڈالتے ہیں تاکہ بدشگونی دور ہو اور رزق میں اضافہ ہو، اس مہینے کو مرنے والوں کے لیے سخت سمجھ کر 313 مرتبہ سورہ مزمل پڑھنا اور 13 تاریخ کو اس مہینے کو ‘طائرہ تیزی’ کے نام سے جانا جاتا ہے۔

ایسے تمام توہمات اور عقائد کی اسلام میں کوئی بنیاد نہیں ہے۔ کوئی دن یا مہینہ کیسے بدقسمت یا نحوست کی علامت ہو سکتا ہے جب کہ دن اور رات کی تبدیلی سے مہینے اور سال بنتے ہیں اور اللہ سبحان وتعالیٰ نے دن اور رات کو نشانی بنایا ہے اور کیلنڈر کو اللہ جیسا بنانے میں ہماری مدد کی ہے۔ کہتے ہیں،

“اور ہم نے رات اور دن کو دو نشانیاں مقرر کی ہیں۔ پھر ہم نے رات کی نشانی کو (اندھیرے سے) مٹا دیا اور دن کی نشانی کو روشن کر دیا تاکہ تم اپنے رب کا فضل تلاش کرو اور برسوں کی گنتی اور حساب معلوم کرو۔ اور ہم نے ہر چیز (تفصیل کے ساتھ) پوری وضاحت کے ساتھ بیان کر دی ہے۔” (الاسراء 17:12)

اللہ سبحانہ وتعالیٰ نے چاند کی مختلف منزلوں کا مقصد بھی بتایا ہے، یہ ہمیں مہینوں کے آغاز اور اختتام کو نشان زد کرنے میں مدد دیتا ہے اور اللہ عزوجل نے یہ بھی بتایا ہے کہ بارہ مہینے ہیں۔ وہ کہتے ہیں:

“وہ آپ سے نئے چاند کے بارے میں پوچھتے ہیں۔ کہو: یہ نشانیاں ہیں انسانوں کے لیے اور حج کے لیے مقررہ مدت کے لیے۔‘‘ (البقرہ 2:189)

’’بے شک مہینوں کی تعداد اللہ کے نزدیک (سال میں) بارہ مہینے ہے، اسی طرح اللہ کی طرف سے اس دن مقرر کیا گیا تھا جب اس نے آسمانوں اور زمین کو پیدا کیا تھا۔‘‘ (التوبہ 9:36)

یہ دن اور رات کا انقلاب ہے جو ہفتوں، مہینوں اور سالوں کو بناتا ہے، جو وقت کو تشکیل دیتا ہے، جس کے بارے میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اللہ تعالیٰ نے فرمایا:

“ابن آدم مجھے تکلیف دیتا ہے کہ وہ وقت کو گالی دیتا ہے حالانکہ میں وقت ہوں: میرے ہاتھ میں سب کچھ ہے، اور میں دن رات کا انقلاب برپا کرتا ہوں۔” (بخاری)

پس یہ بات بالکل واضح ہے کہ دن اور رات اللہ کی طرف سے ہے اور کسی بھی وقت، گھڑی، دن، مہینے یا سال کو بدقسمت سمجھنا بہت بڑی غلط فہمی اور گناہ ہے۔

تاریخی تناظر

عرب تین مہینے ذی القعدہ، ذوالحجہ اور محرم کو حرمت والے مانتے تھے۔ انہوں نے ان مہینوں میں جنگ یا جرم میں ملوث نہیں ہوئے۔ وہ ان مہینوں کے ختم ہونے کا انتظار کرتے تھے تاکہ وہ ان پابندیوں سے آزاد ہو کر ڈکیتی، چوری اور جنگ میں ملوث ہو جائیں۔ اس لیے جیسے ہی محرم ختم ہوتا اور صفر کا آغاز ہوتا، وہ جرائم، چوری، ڈاکہ زنی اور جنگ کی نیت سے اپنے گھروں کو خالی چھوڑ دیتے۔

اس طرح محاورہ ’’صفر المکان‘‘ یعنی خالی مکان مشہور ہوا۔ لفظ ‘صفرون’ یا ‘سفرون’ کا مطلب ہے ‘خالی ہو جانا’۔ جیسا کہ عربی میں کہاوت ہے ’’صفرون من مطاعۃ‘‘ جس کا مطلب ہے ’’گھر خالی کر دیا گیا (اس کے فرنیچر وغیرہ سے)‘‘ [لسان العرب عز بن منظور، جلد چہارم، ص 462-463]

مشہور محدث اور مؤرخ سخاوی نے اپنی مشہور کتاب ‘المشور فی اسماء الایام والشہور’ میں لکھا ہے کہ اس مہینے کو ‘صفر’ کا نام دینے کی وجہ یہی ہے۔ مرتکب ہوئے، لوگ مارے گئے اور گھروں کو خالی کر دیا، انہوں نے اپنے برے اعمال اور برائیوں کو دیکھنے کے بجائے اس مہینے کے ساتھ نحوست اور نحوست جوڑ دی، جیسا کہ اللہ سبحانہ و تعالیٰ نے ہمیں بتایا ہے کہ ہر شخص اپنے شگون کا خود ذمہ دار ہے۔ قسمت.

’’اور ہر شخص کے لیے ہم نے اس کی تقدیر اس کی گردن پر ڈال دی ہے اور ہم اس کے لیے قیامت کے دن ایک نامہ اعمال پیش کریں گے جو اس کے سامنے کھلے گا‘‘ (17:13)

عام طور پر یہ خیال کیا جاتا ہے کہ نحوست بیرونی ذرائع سے آتی ہے جس کی وجہ سے انسان کسی دوسرے شخص یا جانور یا کسی چیز، ایک دن یا ایک مہینے یا ایک عدد کو مورد الزام ٹھہراتا ہے جہاں اللہ سبحان وتعالیٰ نے اس آیت کے ذریعے واضح کیا ہے کہ ہر انسان کا شگون اور نحوست اس کی اپنی بداعمالیوں اور غلط کاموں کی وجہ سے ہوتی ہے۔

اللہ سبحانہ وتعالیٰ قرآن مجید میں مزید فرماتے ہیں

“تمہیں جو بھلائی پہنچتی ہے وہ اللہ کی طرف سے ہے، لیکن جو برائی آتی ہے، وہ تمہاری طرف سے ہے” (4:79)

توہم پرستی شرک ہے۔

ایک آدمی اپنے گھر سے نکلتا ہے، راستے میں ایک کالی بلی اس کے راستے سے گزرتی ہے، وہ اسے برا شگون سمجھتا ہے اور اس لیے واپس گھر چلا جاتا ہے۔ اگرچہ یہ ایک معمولی سا فعل لگتا ہے لیکن حقیقت میں اس کا مطلب یہ ہے کہ وہ یہ سمجھتا ہے کہ کالی بلی کے پاس انسان کی تقدیر بدلنے کی طاقت اور اختیار ہے۔ یہ شرک ہے کیونکہ اس کا مطلب یہ ہے کہ اللہ کے علاوہ بلی کو بھی انسان کی زندگی اور اسے نقصان پہنچانے کا اختیار اور اختیار حاصل ہے (نعوذباللہ)۔

ہمارے معاشرے میں رائج دیگر عام توہم پرستانہ عقائد یہ ہیں کہ صبح کے وقت کسی کو ناپسندیدہ نظر آنے کا مطلب ہے کہ پورا دن بدنصیبی سے بھرا رہے گا، آنکھیں پھڑپھڑانے کا مطلب ہے نحوست اور برائی کی علامت، دائیں ہتھیلی میں خارش کا مطلب ہے کہ پیسہ مل جائے گا، اگر ایک جوتا آجائے تو دوسرے کے اوپر، اس کا مطلب ہے کہ ایک سفر کیا جائے گا۔ رنگوں سے شگون لینا مثلاً کالا پہننے سے بیماری لگ جائے گی، یا کالا لباس نہ پہننا کیونکہ غلاف کعبہ کا رنگ سیاہ ہے، احترام کی وجہ سے سبز رنگ کے جوتے نہ پہنیں کیونکہ سبز رنگ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے گنبد کا رنگ ہے۔ ) مسجد۔

ایسے عقائد رکھنے نے انسان کو نہ صرف حلال چیزوں کو اپنے اوپر حرام کرنے پر اکسایا بلکہ تقدیر اور تقدیر کو ان چیزوں کے ساتھ جوڑنے پر اکسایا جو کہ نہ صرف ایک بہت بڑی گمراہی ہے بلکہ بہت بڑا گناہ ‘شرک’ ہے کیونکہ اللہ کے علاوہ کسی کو اختیار نہیں ہے انسان کی تقدیر پر اختیار ہے اور وہ تمام چیزیں جن سے اچھی یا بری علامتیں نکلتی ہیں وہ اللہ کی مخلوقات کے سوا کچھ نہیں ہیں جن کا دوسری مخلوقات پر کوئی اختیار نہیں۔

حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا

شگون لینا شرک ہے۔ شگون لینا شرک ہے۔ اس نے تین بار کہا۔ ہم میں سے ہر ایک کے پاس کوئی نہ کوئی (توہم) ہوتا ہے، لیکن اللہ اسے توکل کے ذریعے دور کرتا ہے۔ (سنن ابی داؤد)

آپ نے یہ بھی فرمایا کہ جس شخص نے کسی چیز سے نحوست نکالی اور جس کام کا ارادہ کیا تھا اس سے اجتناب کیا اس نے شرک کیا۔ صحابہ نے پوچھا کہ اس کا کفارہ کیا ہو گا، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:

اللھم لا طیر الا طیرک ولا خیر الا خیرک ولا الہ غیرک

’’اے اللہ تیری نشانی کے سوا کوئی نشانی نہیں، تیری خیر کے سوا کوئی نیکی نہیں اور تیرے سوا کوئی عبادت کے لائق نہیں۔‘‘ (مسند احمد)

مسلمان ہونے کے ناطے ہمیں اللہ پر پورا بھروسہ اور بھروسہ رکھنا چاہیے اور دل سے یقین رکھنا چاہیے کہ صرف اللہ ہی ہم پر قدرت رکھتا ہے۔ عرب تین مہینے ذی القعدہ، ذوالحجہ اور محرم کو حرمت والے مانتے تھے۔ انہوں نے ان مہینوں میں جنگ یا جرم میں ملوث نہیں ہوئے۔ وہ ان مہینوں کے ختم ہونے کا انتظار کرتے تھے تاکہ وہ ان پابندیوں سے آزاد ہو کر ڈکیتی، چوری اور جنگ میں ملوث ہو جائیں۔ اس لیے جیسے ہی محرم ختم ہوتا اور صفر کا آغاز ہوتا، وہ جرائم، چوری، ڈاکہ زنی اور جنگ کی نیت سے اپنے گھروں کو خالی چھوڑ دیتے۔

اس طرح محاورہ ’’صفر المکان‘‘ یعنی خالی مکان مشہور ہوا۔ لفظ ‘صفرون’ یا ‘سفرون’ کا مطلب ہے ‘خالی ہو جانا’۔ جیسا کہ عربی میں کہاوت ہے ’’صفرون من مطاعۃ‘‘ جس کا مطلب ہے ’’گھر خالی کر دیا گیا (اس کے فرنیچر وغیرہ سے)‘‘ [لسان العرب عز بن منظور، جلد چہارم، ص 462-463]

مشہور محدث اور مؤرخ سخاوی نے اپنی مشہور کتاب ‘المشور فی اسماء الایام والشہور’ میں لکھا ہے کہ اس مہینے کو ‘صفر’ کا نام دینے کی وجہ یہی ہے۔ مرتکب ہوئے، لوگ مارے گئے اور گھروں کو خالی کر دیا، انہوں نے اپنے برے اعمال اور برائیوں کو دیکھنے کے بجائے اس مہینے کے ساتھ نحوست اور نحوست جوڑ دی، جیسا کہ اللہ سبحانہ و تعالیٰ نے ہمیں بتایا ہے کہ ہر شخص اپنے شگون کا خود ذمہ دار ہے۔ قسمت.

’’اور ہر شخص کے لیے ہم نے اس کی تقدیر اس کی گردن پر ڈال دی ہے اور ہم اس کے لیے قیامت کے دن ایک نامہ اعمال پیش کریں گے جو اس کے سامنے کھلے گا‘‘ (17:13)

عام طور پر یہ خیال کیا جاتا ہے کہ نحوست بیرونی ذرائع سے آتی ہے جس کی وجہ سے انسان کسی دوسرے شخص یا جانور یا کسی چیز، ایک دن یا ایک مہینے یا ایک عدد کو مورد الزام ٹھہراتا ہے جہاں اللہ سبحان وتعالیٰ نے اس آیت کے ذریعے واضح کیا ہے کہ ہر انسان کی نحوست اور نحوست اس کی اپنی بداعمالیوں اور برائیوں کی وجہ سے ہوتی ہے۔

“تمہیں جو بھلائی پہنچتی ہے وہ اللہ کی طرف سے ہے، لیکن جو تمہیں برائی پہنچتی ہے، وہ تمہاری طرف سے ہے” (4:79)

آڈیو لیکچرز

ڈاؤن لوڈ